Don't Miss
graphic2

اخبار

بی جے پی بھارتی کشمیر کی مخلوط حکومت سے الگ

'بی جے پی' کی جانب سے حمایت واپس لینے کے بعد محبوبہ مفتی کی حکومت اسمبلی میں اپنی اکثریت کھو بیٹھی ہے۔ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

کم جونگ ان دو روزہ دورے پر چین پہنچ گئے

رواں سال مارچ کے بعد سے کم جونگ ان کا چین کا یہ تیسرا دورہ ہے جس سے دونوں ملکوں کے درمیان قریبی تعلقات کا اظہار ہوتا ہے۔ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

نواز شریف بدستور لندن میں، عدالت میں حاضری سے استثنیٰ منظور

منگل کو نواز شریف کے وکلا نے اسلام آباد کی احتساب عدالت میں سات روز تک حاضری سے استثنٰی کی درخواست دی جس پر عدالت نے سابق وزیرِ اعظم کو چار روز کا استثنیٰ دے دیا۔ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

اگست میں ہونے والی امریکہ جنوبی کوریا فوجی مشقیں منسوخ

'الچی فریڈم گارڈین' کے نام سے ہونے والی یہ مشقیں ہر سال اگست یا ستمبر کے مہینوں میں ہوتی ہیں۔ گزشتہ سال ہونے والی یہ مشقیں 11 دن جاری رہی تھیں جن میں امریکہ کے 17500 اہلکار شریک تھے۔ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

ایران میں صوفی درویش کو پھانسی، امریکہ کی مذمت

اطلاعات کے مطابق، ثلاث کو پیر کی صبح راجائی شہر کے قیدخانے میں تخت دار پر لٹکایا گیا، جسے حالیہ دنوں کے دوران امریکی محکمہ خزانہ نے بدنام جیل قرار دیا تھا، جہاں انسانی حقوق کی واضح خلاف ورزیاں سرزد ہوتی ہیں بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

’’طالب ہو یا فوجی، ایک ہماری جان ہے تو دوسرا ہمارا جگر‘‘

افغانستان کے وزیربرائے امور نوجوانان کمال سادات نے وزارت دفاع کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا ہے کہ ہزاروں طالبان عید کی عارضی جنگ بندی کے بعد قیادت کے بلانے کے باجود اپنے گھروں میں ہیں اور وہ واپس مورچوں پر نہیں گئے ہیں۔ وہ امن عمل کا حصہ بننا چاہتے ہیں۔ وائس آف امریکہ کے پروگرام جہاں رنگ میں گفتگو کرتے ہوئے کمال سادات نے کہا کہ طالبان جنگجو جب عیدالفطر کے موقع پرتین روز کی عارضی جنگ بندی کے بعد مورچے چھوڑ کر شہروں میں آئے تو لوگوں نے ان کا کھلے دل سے استقبال کیا۔ ’’یہ عید ہم سب کے لیے منفرد تھی۔ ہم نے ان کو خوش آمدید کہا۔ جب وہ شہر آئے تو لوگوں نے اس کا زبردست استقبال کیا۔ وزیرداخلہ بھی ان کے استقبال کے لیے آئے۔وہ عام لوگوں کے ساتھ آئسکریم کھاتے رہے۔ سوشل میڈیا پر کئی تصاویر آپ دیکھ سکتے ہیں‘‘ افغان یوتھ منسٹر کے مطابق سب سے زیادہ جو ویڈیو وائرل ہوئی اس میں ایک افغان نیشنل آرمی کمانڈر اور ایک طالب کمانڈر ملک کے نعرے لگا رہے ہیں ’’ یو زان بل مہ جگر، طالب دے کہ عسکر‘‘ یعنی طالب ہو یا فوجی، ایک ہماری جان ہے تو دوسرا ہمارا جگر‘‘ افغان وزیر کمال سادات نے کہا کہ مورچوں پر واپس نہ جانے والے طالبان کے بارے میں خبریں آ رہی ہیں کہ وہ چاہتے ہیں کہ ہائی پیس کونسل سے بات کر سکیں۔ یونائٹڈ سٹیٹ انسٹی ٹیوٹ آف پیس میں جنوبی ایشیا سنٹر کے سربراہ معید یوسف نے وائس آف امریکہ سے گفتگو میں کہا کہ عارضی جنگ بندی کے اثرات توقع سے کہیں زیادہ اچھے سامنے آ رہے ہیں اور کوئی شک نہیں کہ اس کے اثرات دور رس ہوں گے۔ افغان صدر اشرف غنی نے بھی امن کے نعرے کے ساتھ اپنی مہم شروع کر دی ہے۔ یہ ثابت ہو گیا ہے کہ طالبان چاہیں تو فورا جنگ بندی ہو سکتی ہے۔ ان کے کہنے پر جنگجوؤں نے ہتھیار پھینک دیے، مگر جب انہی جنگجووں کو واپس مورچوں پر آنے کو کہا کہ تو ان میں سے کئی تذبذب کا شکار ہیں اور اس تندہی سے واپس نہیں گئے۔ اب اس پیش رفت کو عملی شکل دینے کے لیے افغان حکومت، طالبان دونوں اطراف میں موجود امن پسندوں کو اپنی کوششیں تیز کر دینی چاہیں۔ بین الاقوامی اداروں کے ساتھ وابستہ صحافی عامر لطیف کا کہنا تھا کہ عید پر جو مناظر دیکھنے کو ملے، کچھ عرصہ پہلے تک اس کا تصور بھی ممکن نہیں تھا۔ اس سے امید پیدا ہو  گئی ہے کہ آگے چل کر امن کو یقینی بنایا جا سکے۔ ایک افغان نوجوان محمد وقار گل بھی بہت خوش ہیں۔ طالبان کے ساتھ چسم سیر پل خمری میں بنائی گئی اپنی سیلفیاں وائس آف امریکہ کو بھیجتے ہوئے کہتے ہیں، ’’طالب بھائی اس عید پر عام لوگوں سے ملے ہیں، افغانستان میں پولیس اور فوج کے ساتھ بھی عید پر سیلفیاں بنوائی ہیں۔ دعا کیجئے گا کہ ہمارے ہاں بھی امن آئے۔ ‘‘ افغان صدر اگرچہ جنگ بندی میں توسیع کی بات کر رہے ہیں، مگر طالبان نے اپنے حملے شروع بھی کر دیے ہیں۔ تاہم مبصرین کے  بقول دیکھنا یہ ہو گا کہ افغان طالبان اپنے جن بھائیوں کے ساتھ کھانا کھا کر گئے ہیں، جن کے ساتھ بغل گیر ہو ئے ہیں، کیا وہ ان کے سینوں کو چھلنی کر سکیں گے؟ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

’’بھارت پاکستان تنازعے میں تیسرے فریق کی کوئی گنجائش نہیں‘‘

بھارت میں چینی سفیر لو ژاؤہوئی نے  آج پیر کے روز تجویز پیش کی ہے کہ بھارت اور پاکستان کے دو طرفہ تعلقات کو بہتر بنانے کیلئے شنگھائی کانفرنس تنظیم کے تحت چین، بھارت اور پاکستان کے مابین سہ فریقی مزاکرات کئے جائیں۔ تاہم بھارت کی وزارت خارجہ نے فوری طور پر اس تجویز کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے تعلقات دو طرفہ نوعیت کے ہیں اور اس میں کسی تیسرے فریق کی مداخلت کی کوئی گنجائش موجود نہیں ہے۔ لو ژاؤہوئی 2006 سے 2010 تک پاکستان میں چین کی سفیر رہ چکے ہیں۔ اُنہوں نے پاک۔بھارت تعلقات کی بہتری کیلئے سہ فریقی مزاکرات کی تجویز چینی سفارتخانے کی جانب سے منعقدہ ایک سیمنار میں دی جس کا موضوع تھا، ’’ووہن سے آگے: چین بھارت تعلقات کتنی سرعت سے اور کتنی دور جا سکتے ہیں‘۔‘‘ سیمنار کے دوران چینی سفیر نے کہا کہ سیکیورٹی کے حوالے سے تعاون شنگھائی تنظیم کانفرنس کے بنیادی ستونوں میں سے ایک ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ  اگر چین، روس اور منگولیا سہ فریقی مزاکرات کر سکتے ہیں تو بھارت، چین اور پاکستان کیوں نہیں۔ سیمنار میں چین بھارت تعلقات پر تقریر کے بعد سفیر لو نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ وہ ایسے سہ فریقی مزاکرات کو ایک اچھا اور مثبت خیال سمجھتے ہیں کیونکہ اس سے دوطرفہ تنازعات کو حل کرنے اور علاقے میں امن و استحکام کے قیام میں مدد مل سکتی ہے۔ تاہم بھارتی وزارت خارجہ کےترجمان نے سفیر لو کے اس بیان کو اُن کی ذاتی رائے قرار دیتے ہوئے رد کر دیا۔  اُنہوں نے کہا کہ بھارت چینی حکومت سے ایسی کوئی تجویز قبول نہیں کرے گا اور پاکستان کے ساتھ تعلقات صرف دو طرفہ نوعیت کے ہیں اور کسی تیسرے فریق کو اس میں مداخلت کی کوئی ضرورت نہیں۔ بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

امریکہ تارکین وطن کا کیمپ نہیں بنے گا: ٹرمپ

ٹرمپ نے کہا کہ ''سرحد کے بغیر کوئی ملک، ملک نہیں رہتا۔ ہم اپنے وطن کے تحفظ اور سلامتی کے خواہاں ہیں۔۔۔اور ملک سرحد سے شروع ہوتا ہے'' بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

مخالف ہوا کا شہر

کیا ایم کیو ایم پہلے کی طرح الیکشن جیت پائے گی؟ سیاست دان اور تجزیہ کار ہی نہیں، ووٹر بھی الجھن کا شکار ہیں بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

سیاسی و مذہبی قیدیوں کو فوری رہا کیا جائے، امریکہ کا روس سے مطالبہ

محکمہ خارجہ نے روس سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ تمام قیدی جنھیں سیاسی یا مذہبی طور پر حراست میں رکھا گیا ہے، اُنھیں فوری طور پر رہا کیا جائے اور اختلاف رائے اور پُرامن مذہبی عقائد رکھنے والوں کو دبانے کے لیے قانونی نظام کا استعمال بند کیا جائے بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

Read More »

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow