Don't Miss
graphic2
امریکہ کے منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ٹوئیٹر پر اپنے ایک پیغام میں اُن خبروں کو جھوٹ قرار دیا ہے جن میں کہا گیا ہے کہ روسی ایجنٹوں کے پاس ڈونلڈ ٹرمپ کے بارے میں ذاتی اور مالیاتی نوعیت کے ایسی معلومات ہیں جو پریشانی کی حامل ہو سکتی ہیں۔ ٹرمپ نے اپنی ٹویٹ میں کہا کہ "جھوٹی خبر، یہ سرا سر سیاسی الزام تراشی ہے۔" وہ قبل ازیں روس کے ساتھ قریب تعلقات کا دفاع کرتے ہوئے اس بات اسے انکار کر چکے ہیں کہ ماسکو صدراتی انتخاب پر کسی طور اثر انداز ہوا تھا۔ اطلاعات کے مطابق ٹرمپ کو گزشتہ جمعہ کو ان معلومات سے متعلق دو صفحات پر مشتمل ایک خلاصہ پیش کیا گیا تھا۔ امریکہ کے صدارتی انتخاب میں روس کی مبینہ مداخلت کے بارے میں امریکی انٹیلی جنس اداروں کی طرف سے گزشتہ ہفتے ڈونلڈ ٹرمپ کو حساس نوعیت کی ایک بریفنگ دی گئی۔ ’سی این این‘ نے پہلی بار منگل کو ڈونلڈ ٹرمپ سے متعلق نام نہاد پریشان کن معلومات کے بارے میں خبر دی۔ اب تک کی تمام خبریں نام ظاہر کیے بغیر ذرائع کے حوالے سے سامنے آئی ہیں اور اس بارے میں معلومات صدر اوابا کو جمعرات کو فراہم کی گئی تھیں۔ ذرائع ابلاغ میں سامنے آنے والی خبروں میں یہ خیال ظاہر کیا گیا ہے کہ واشنگٹن کے بعض صحافی اور سیاست دان گزشتہ سال کے اواخر سے ان معلومات سے آگاہ تھے۔  بشکریہ خبریں - وائس آف امریکہ

روسی ایجنٹوں کا دعویٰ ‘جھوٹی خبر’ ہے: ٹرمپ

امریکہ کے منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ٹوئیٹر پر اپنے ایک پیغام میں اُن خبروں کو جھوٹ قرار دیا ہے جن میں کہا گیا ہے کہ روسی ایجنٹوں کے پاس ڈونلڈ ٹرمپ کے بارے میں ذاتی اور مالیاتی نوعیت کے ایسی معلومات ہیں جو پریشانی کی حامل ہو سکتی ہیں۔ ٹرمپ نے اپنی ٹویٹ میں کہا کہ “جھوٹی خبر، یہ سرا سر سیاسی الزام تراشی ہے۔” وہ قبل ازیں روس کے ساتھ قریب تعلقات کا دفاع کرتے ہوئے اس بات اسے انکار کر چکے ہیں کہ ماسکو صدراتی انتخاب پر کسی طور اثر انداز ہوا تھا۔ اطلاعات کے مطابق ٹرمپ کو گزشتہ جمعہ کو ان معلومات سے متعلق دو صفحات پر مشتمل ایک خلاصہ پیش کیا گیا تھا۔ امریکہ کے صدارتی انتخاب میں روس کی مبینہ مداخلت کے بارے میں امریکی انٹیلی جنس اداروں کی طرف سے گزشتہ ہفتے ڈونلڈ ٹرمپ کو حساس نوعیت کی ایک بریفنگ دی گئی۔ ’سی این این‘ نے پہلی بار منگل کو ڈونلڈ ٹرمپ سے متعلق نام نہاد پریشان کن معلومات کے بارے میں خبر دی۔ اب تک کی تمام خبریں نام ظاہر کیے بغیر ذرائع کے حوالے سے سامنے آئی ہیں اور اس بارے میں معلومات صدر اوابا کو جمعرات کو فراہم کی گئی تھیں۔ ذرائع ابلاغ میں سامنے آنے والی خبروں میں یہ خیال ظاہر کیا گیا ہے کہ واشنگٹن کے بعض صحافی اور سیاست دان گزشتہ سال کے اواخر سے ان معلومات سے آگاہ تھے۔  بشکریہ خبریں – وائس آف امریکہ

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Powered by Dragonballsuper Youtube Download animeshow